12

ٹی آر ایس اور کانگریس اقلیتوں کو خوشامد کرنے کی پالیسی پر عمل پیرا: امیت شاہ

حیدرآباد : بی جے پی کے صدر امیت شاہ نے کہا ہے کہ ٹی آر ایس اور کانگریس دونوں اقلیتوں کی خوشامد میں یقین رکھتے ہیں۔انہوں نے کہاکہ کانگریس پارٹی اقلیتوں کے لئے علحدہ ا سپتالوں کی بھی بات کررہی ہے۔ میں کانگریس کے صدر راہل گاندھی سے یہ پوچھنا چاہتا ہوں ان غریب لوگوں کا کیا ہوگا جن کا تعلق اقلیتی طبقات سے نہیں ہے ۔

انہوں نے اعادہ کیا کہ زعفرانی جماعت مذہب کی بنیاد پر ریزرویشن کی حامی نہیں ہے کیوں کہ یہ دستور کے خلاف ہے۔ چندرشیکھرراو نے مسلمانوں کے لئے 12فیصد ریزرویشن کا وعدہ کیا ہے ۔ بی جے پی اور اس کا کیڈر اس بات کو یقینی بنائے گا کہ تلنگانہ میں مذہب کی بنیاد پر ریزرویشن پر عمل نہ ہونے پائے۔ بی جے سربراہ نے الزام لگایا کہ اقلیتوں کی خوشامد کی سیاست کے حصہ کے طور پر یہ اپوزیشن جماعت نے تلنگانہ میں برسراقتدار آنے پر اقلیتوں کے لئے 20لاکھ روپے کی تعلیمی امداد کابھی اعلان کیا۔

انہوں نے تلنگانہ کے محبوب نگر ضلع کے نارائن پیٹ میں انتخابی جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مجلس کے اکبرالدین اویسی نے کہا تھا کہ جنوبی ہند کی اس ریاست کے چاہے کوئی بھی وزیراعلی بنے اس کو ان کی پارٹی کے سامنے جھکنا پڑے گا۔ انہوں نے مجلس اورٹی آر ایس پر نکتہ چینی کرتے ہوئے دعوی کیا کہ اویسی برادران کے خوف سے کے سی آر حکومت 17ستمبر کو ریاست کی آزادی کا دن نہیں منارہی ہے۔

انہو ں نے اس عزم کا اظہار کیا کہ تلنگانہ میں برسراقتدار آنے پر دھوم دھام کے ساتھ حیدرآباد کی یوم آزادی کی تقاریب منائی جائیں گی ۔پسماندہ خاندانوں کو ڈبل بیڈروم مکانات دینے کے چندرشیکھرراو کے وعدے کا حوالہ دیتے ہوئے انہو ں نے کہا کہ ٹی آر ایس سربراہ نہ صرف اس اسکیم پر عمل کرنے میں ناکام ہوگئے ہیں بلکہ وزیراعظم کی آواز یوجنا کے فائدوں سے ریاست کے عوام کو محروم رکھا گیا ہے۔

انہو ں نے نارائن پیٹ اور تلنگانہ کی بہ حیثیت مجموعی ترقی کے لئے بی جے پی کو ووٹ دینے رائے دہندوں پر زور دیا۔ انہوں نے کہا کہ اگر ریاستی اسمبلی کے انتخابات آئندہ سال مئی میں ہونے والے لوک سبھا کے انتخابات کے ساتھ کروائے جاتے تو تلنگانہ میں سینکڑوں کروڑ روپے بچائے جاسکتے تھے۔ کے سی آر نے کروڑہا روپے کے انتخابی مصارف کا بوجھ ریاست پر عائد کردیا ہے ۔ اس کے ذمہ دار کون ہیں ؟ کے سی آر کو مئی میں اپنی کامیابی پر شبہ تھا ‘ وزیراعظم مودی کی لہر سے چندرشیکھرراو خوفزدہ ہوگئے تھے۔

انہو ں نے الزام لگایا کہ کانگریس نے اپنے انتخابی منشورمیں مساجد اور چرچس کے لئے مفت بجلی کا وعدہ کیا نہ کہ منادر کے لئے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں